showcase demo picture

نزلاوی اَمراض، نظام تنفس کی خرابیاں، الرجی، چھینکیں، دائمی نزلہ زکام، نمونیا اور کھانسی کا ہومیوپیتھک علاج ۔ حسین قیصرانی

 نزلہ، کھانسی، زکام، ناک کا بند رہنا، چھینکیں، الرجی، سوتے ہوئے ناک کا بند ہوجانا یا سانس کی تکالیف وغیرہ کی شکائت بہت عام ہے۔ خاص طور پر موسم سرما میں تو یوں لگتا ہے کہ ہر دوسرے اِنسان کو نزلہ لگ رہا ہے، لگا ہوا ہے یا ابھی لگ کر ختم ہوا ہے مگر اُس کے اثرات ابھی بھی باقی ہیں۔ نزلہ، زکام اور سانس کی تکلیفوں میں مبتلا افراد کو محکمہ موسمیات کی طرح موسم اور ماحول کی تبدیلی کا علم و اِحساس قبل از وقت ہو جاتا ہے۔ سردی کی لہر دو دن بعد پہنچتی ہے مگر اِن پر اُس کا اثر پہلے ہی ہو چکا ہوتا ہے۔ ہمارے آس پاس کئی لوگ ایسے بھی ہیں کہ ہر بدلتا موسم اُن کی نازک طبیعت پر گہرا اثرانداز ہوتا ہے۔ ذرا سی بے احتیاطی ہوئی، سردی لگی اور نزلہ، زکام، چھینکیں شروع ہو گئیں اور پھر کھانسی۔

اگر نزلہ و کھانسی مزمن (Chronic) شکل اختیار کر لے یا بار بار اس کا حملہ ہو یا باوجود ہر ممکن احتیاط کے لگ جائے تو یہ موروثی مزاج کا سبب ہوتا ہے — خاص طور پر ٹی بی یا سرطانی مزاج! اِس کو دبانے کی بجائے نہایت توجہ اور ذمہ داری سے اِس کا باقاعدہ علاج کروانا ضروری ہے۔

نزلہ کا اخراج یا جِلدی اُبھار بالعموم ان دو خبیث اَمراض (ٹی بی یا کینسر) سے بچانے کی قدرتی مدد ہے جس سے ان کا زہریلا مواد خارج ہوتا رہتا ہے۔ اسی طرح کان بہنا، مقعد کا ناسور وغیرہ کا اخراج بھی کسی بڑی اور موذی بیماری سے بچانے کی قدرتی مدد ہے۔ اگر یہ مزمن شکل اختیار کر لیں اور جان نہ چھوڑیں یعنی بار بار ہوتے رہیں تو اِن کو بڑی اہمیت دینی چاہئے اور باقاعدہ علاج کروانا چاہئے۔ وقتی دواؤں، نسخوں، ٹوٹکوں، بار بار اینٹی الرجی یا اینٹی بائیوٹیک دواؤں کے استعمال سے کچھ وقت کے لئے دَب تو سکتے ہیں مگر اکثر اپنا گہرا اثر چھوڑ جاتے ہیں جو بعد میں کسی موذی مرض یا لمبی بیماری کی شکل میں ظاہر ہوتا ہے۔ کلاسیکل ہومیوپیتھی کے ماہر ڈاکٹر ایسی صورت میں مریض کی مکمل تفصیل اور ہسٹری لے کر اُس کے مزاج کے مطابق دوا مثلاً ٹیوبرکیولنم، بسیلینم، کارسنوسن، ہیپوزینم یا سورائنم میں سے کسی کو بڑی احتیاط سے اِستعمال میں لاتے ہیں۔

کئی مزمن اَمراض اور مریض دیگر ہومیوپیتھک دواؤں سے بھی ڈاکٹر صاحبان ٹھیک کرتے ہیں مگر اگر علاماتِ مرض و مریض، دوا کی علامات کے عین مطابق مل جائیں تو۔ یہ کام بے حد محنت طلب ہے اور اِس کے لئے گہرا علم اور وسیع تجربہ مطلوب ہوتا ہے۔ جن ڈاکٹر صاحبان کو مٹیریا میڈیکا اور کیس ٹیکنگ پر عبور ہوتا ہے وہ جب دوائی کا اِنتخاب کرتے ہیں تو مریض کو حیرت انگیز فائدہ ہوتا ہے۔ مشہور یورپی ہومیوپیتھک ڈاکٹر جارج وتھالکس George Vithoulkas میں یہ فن اپنے عروج پر نظر آتا ہے۔ مجھے اُن کے لیکچرز سننے اور کیس ٹیکنگ کے طریقوں کو دیکھنے اور سیکھنے کا موقع ملا ہے۔ اکثر ایسا ہوتا تھا کہ مریض ایک علامت بتاتا اور جارج وتھالکس اُس کے اگلے تین چار مسائل بتا دیا کرتا تھا۔ اگر فن اور قابلیت اِس درجہ عروج پر ہو اور وتھالکس کے بقول ڈاکٹر کا ہر سوال کسی دوا کو ذہن میں لا کر کیا گیا ہو تو پھر جو دوائی منتخب ہوتی ہے وہ اکثر اوقات اتنا گہرا اثر کرتی ہے کہ مرض کی جڑ بنیاد کو ختم کر دیتی ہے۔ یہ اہم نکتہ بھی وتھالکس اور دوسرے کلاسیکل ہومیوپیتھک ڈاکٹر بیان کرتے ہیں کہ اِس انداز سے منتخب کی گئی دوا (جس میں دوا اور مرض کی علامات ایک جیسی ہوں) دی جائے تو مریض کی جِلد پر اُبھار ظاہر ہو جاتا ہے یا کوئی اخراج جاری ہو جاتا ہے جو ماضی میں ایلوپیتھک دواؤں سے دَب گیا تھا اور اس ابھار اور اخراج کو جاری رکھنے سے رفتہ رفتہ مرض ختم ہو جاتا ہے۔ کچھ وقت کے بعد یہ اُبھار، اَلرجی، خارش یا اَخراج خود بخود غائب ہو جاتے ہیں۔ یہ بڑا ہی اہم نکتہ ہے اور اِس مرحلہ پر ڈاکٹر اور مریض دونوں کو صبر اور سمجھ سے کام لینا چاہئے۔

اب آتے ہیں نزلہ کی تشخیص، علامات اور علاج کی طرف!

نزلاوی جھلیوں میں خراش یا ورمی کیفیت پیدا ہو جاتی ہے۔ اَسباب جیسا کہ اوپر بیان ہو چکے ہیں: سردی لگنے سے یا کوئی تُرش یا ٹھنڈی چیز کھانے پینے سے اور بعض اوقات تیز مرچ مصالحہ سے۔

نزلہ میں عموماً پہلے ناک اور حلق میں خراش پیدا ہوتی ہے۔ چھینکیں آتی ہیں اور ناک سے پانی کی طرح کا اخراج ہونے لگتا ہے۔ اگر یہ اخراج رُکے نہیں یا دواؤں سے روکا نہ جائے تو ایک صحت مند انسان میں گاڑھا ہو کر ختم ہو جاتا ہے۔ گلا خراب اور کھانسی نزلہ کے ساتھ ہو جائے تو وہ بھی بالعموم ٹھیک ہو جائے گا۔ بعض اوقات معمولی سی غلطی سے، مختلف قسم کی دوائیاں دینے سے یا اخراج دبا دینے سے نزلہ کھانسی طُول پکڑ جاتے ہیں اور نوبت دَمہ یا ٹی بی تک جا پہنچتی ہے۔ کئی دفعہ نمونیا ہوجاتا ہے اور اس کا نتیجہ بھی اکثر ٹی بی ہی نکلتا ہے۔ نزلہ کھانسی کا بر وقت اور باقاعدہ علاج ہونا چاہئے۔ ذیل میں علامات کے ساتھ ہومیوپیتھک اَدویات راہنمائی کے لئے دی جا رہی ہیں۔ اِن کی پوٹینسی اور خوراک کا تعین ہومیوپیتھک ڈاکٹر مریض اور مرض کی صورتِ حال کو پیشِ نظر رکھ کر ہی کر سکتا ہے۔

اچانک سردی لگ جانے سے ہو تو: اکونائٹ
بدلتے موسم میں جب دن گرم اور رات ٹھنڈی ہوتی ہے تو: ڈلکا مارا
جب اخراج گاڑھا ہو جائے تو مرکسال
اور طول پکڑ رہا ہو تو: ہیپرسلفر
اگر ٹانسلز متورم ہو جائیں اور درد کریں تو: بیلا ڈونا
اگر نمونیا کی شکایت ہو جائے تو اکونائٹ کے بعد: برائیونیا یا فاسفورس (وقفہ سے) میں سے جس کی علامات ملتی ہوں۔

یاد رہے کہ نمونیا جیسی تکالیف (نزلہ‘ کھانسی ہو جانے کے علاوہ بھی) سردی لگ جانے سے ہو جاتی ہےبالخصوص بچوں میں۔ اس کے لئے اکونائٹ‘ برائیونیا‘ فاسفورس ہی علامات کے مطابق اہم دوائیں ہیں۔ اگر نمونیا طول پکڑ جائے تو لائیکو پوڈیم سب سے بہترین ہومیوپیتھک دوا ہے۔ نمونیا کے لئے نیوموکوکسینم بھی بے حد مفید دوا ہے۔
بفرضِ محال کسی دوا سے شفا نہ ہو رہی ہو تو ٹیوبرکیولینم چھوٹی خوراک میں بڑی کارآمد دوا ہے اور اس کی صرف ایک خوراک ہی کافی ثابت ہوتی ہے۔

بچوں کا نمونیا
ننھے بچوں کو نمونیا ہو جائے تو بعض اوقات انیٹم ٹارٹ ۳۰ (صرف ایک خوراک ) کا دینا ناگزیر ہو جاتا ہے۔ ننھے بچوں میں اِس کی علامات مخصوص ہوتی ہیں۔ بخار، کھانسی، سینے میں سانس لیتے ہوئے یا کھانستے وقت بلغم کی آواز، غنودگی، غنودگی میں چونکنا، پیاس بالکل ختم۔ یہ انٹم ٹارٹ کی خاص علامات ہیں۔

نمونیا کے مریض کی عمومی علامات
بے چین ہو گا یا غنودگی ہو گی، سانس میں تیزی، نتھنے سانس لیتے ہوئے پھولتے ہوں گے، درجہ حرارت مسلسل زیادہ جو کم ہو بھی تو تھورا سا مثلاً 104 ڈگری سے گر کر102 ڈگری، عموماً پیاس کی شدت، کھانستے ہوئے سینے میں درد، بچہ ہو گا تو روئے گا۔ یہ کیفیت دیکھنے کے بعد سٹیتھوسکوپ کی عملاً ضرورت ہی نہیں رہتی۔

اعضائے تنفس کی کچھ اَور بیماریاں بھی ہیں مثلاً: پھیپھڑوں کا پھیل جانا، پھیپھڑوں کا بلغم سے بھرا رہنا، پھیپھڑے کا سرطان (حلق کے امراض اور ٹی بی بھی اِسی زمرے میں آتے ہیں مگر اُن کا ذکر کسی اور نشست میں کریں گے)۔ پھیپھڑوں کا فالج جو لاکھوں میں ایک کو ہو جاتا ہے۔ ان تمام امراض کا یا تو خاندانی مزاج ہوتا ہے یا نزلہ کھانسی کے بگڑ جانے سے ہوتا ہے۔ ان امراض میں بھی ٹیوبرکیولینم یا بسیلینم یا ہپوزینیم کام آتی ہیں۔ دیگر ادویات سے شاید ہی کوئی مریض مستقلاً شفا یاب ہو جائے۔

الرجی بھی اِن اَمراض میں شامل کی جاتی ہے۔ ہومیوپیتھی طریقۂ علاج میں الرجی قابلِ علاج ہے بشرطیکہ اِس کے لئے بہت اَدویات استعمال نہ کی گئی ہوں اور مریض کی تمام تفصیلات لے کر اور مزاج کو سمجھ کر مزاجی دوا استعمال کروائی جائے۔

نزلاوی اَخراج اور علاج کی مزید تفصیل:

بالکل ابتدائی حالت ہو تو: فیرم فاس یا اکونائٹ (اگر شدید ہو)
پانی کی طرح: نیٹرم میور
سفید: کالی میور یا مرکسال
پیلا: کالی سلف یا مرکسال
سبز: نیٹرم سلف یا ہپرسلف
مشکل سے نکلے، آنکھوں کے پیچھے اور سر، چہرے وغیرہ میں درد: کالی بائی کرومیکم


حسین قیصرانی – سائیکوتھراپسٹ & ہومیوپیتھک کنسلٹنٹ، بحریہ ٹاون، لاہور پاکستان۔ فون 03002000210

Related Posts

Posted in: Homeopathic Awareness, Homeopathy in Urdu, Respiratory Tagged: , , , ,
Return to Previous Page

Leave a Reply

Your email address will not be published.

About - Hussain Kaisrani

Hussain Kaisrani, The chief consultant and director at Homeopathic Consultancy, Lahore is highly educated, writer and a blogger kaisrani.blogspot.com He has done his B.Sc and then Masters in Philosophy, Urdu, Pol. Science and Persian from the University of Punjab. Studied DHMS in Noor Memorial Homeopathic College, Lahore and is a registered Homeopathic practitioner from National Council of Homeopathy, Islamabad He did his MBA (Marketing and Management) from The International University. He is working as a General Manager in a Publishing and printing company since 1992. Mr Hussain went to UK for higher education and done his MS in Strategic Management from University of Wales, UK...
read more [...]

HOMEOPATHIC Consultants

We provide homeopathic consultancy and treatment for all chronic diseases.

Contact US


HOMEOPATHIC Consultants
Bahria Town Lahore – 53720

Email: kaisrani@gmail.com
Phone: (0092) 03002000210
Blog: kaisrani.blogspot.com
Facebook:fb.com/hussain.kaisrani
read more [...]