ہومیوپیتھک علاج میں نایاب پوٹینسی کا اِستعمال - ڈاکٹر ایل ایم خان (انڈیا) کے ساتھ ایک علمی نشست کا احوال • HOMEOPATHIC Consultancy HOMEOPATHIC Consultancy
showcase demo picture

ہومیوپیتھک علاج میں نایاب پوٹینسی کا اِستعمال – ڈاکٹر ایل ایم خان (انڈیا) کے ساتھ ایک علمی نشست کا احوال

آج، اتوار کے دن، پروفیسر ڈاکٹر ایل ایم خان سے مخصوص اور نایاب پوٹینسی پر گفتگو ہوئی۔ میرے لئے نایاب پوٹینسی کا معاملہ بالکل ہی نئی بلکہ اچنبھے کی بات تھی۔ ہومیوپیتھک لٹریچر میں جب اور جہاں نایاب پوٹینسی کا تذکرہ ملتا ہے وہاں، بالعموم، صرف دو امور پر بحث ہوتی ہے۔ ایک یہ کہ اِس کا دستیاب نہ ہونا اور دوسرے اِس کے اِستعمال پر بے یقینی کا اظہار۔ اِن حالات میں اگر کہیں علاج میں پھرپور کامیابی کسی مخصوص پوٹینسی کے ضمن میں پڑھتے بھی ہیں تو وہ معاملہ صرف علمی حد تک محدود رہتا ہے۔

اب جب ڈاکٹر خان نے پوٹینسی کے ضمن میں اپنے گہرے علم اور اُس کی کلینیکل اہمیت کو پیش کیا تو نایاب پوٹینسی پر ہمارا یقین پُختہ کر دیا۔ انہوں نے عظیم ہومیوپیتھس مثلاً ڈاکٹر گورینسی، ڈاکٹر نیش، ڈاکٹر بیکر اور ڈاکٹر کلارک کے عام ادویات کی نایاب پوٹینسیوں کے استعمال پر تفصیل بیان کی۔ اُن کی تلقین تھی کہ اس معاملے کو نظرانداز نہیں کرنا چاہئے کیوں کہ کئی نایاب پوٹینسیوں پر بخوبی کلینیکل تجربات کئے جا چکے ہیں۔ ڈاکٹر ایل ایم خان کا یہ نکتہ بڑی ہی اہمیت کا حامل ہے کہ کینٹ فلاسفی کے لیول کو پوٹینسیوں کی مروجہ سیریز (مثلاً 30، 200، 1ایم اور 10ایم وغیرہ) کے ساتھ مخصوص نہیں کر دینا چاہئے بلکہ اِسے بیماری اور دوا کی پروونگ کے باہمی تعلق کے ساتھ ہم آہنگ کرنا چاہئے۔ حقیقت یہ ہے کہ ہومیوپیتھی میں کوئی بھی پوٹینسی فکس اور فائنل نہیں ہے؛ مستقل حیثیت صرف اور صرف بالمثل دوا کے قانون کو حاصل ہے اور وہ تبدیل نہیں ہو سکتا۔

گفتگو کا خلاصہ یہ تھا کہ حسبِ ضرورت نایاب پوٹینسی کا اِستعمال کروانا چاہئے۔ چونکہ اِن کا اِستعمال کلینکل تجربات میں بے حد مفید ثابت ہو چکا ہے؛ اِس لئے ڈاکٹر خان نے روزمرہ پریکٹس میں نایاب پوٹینسی سے اِستفادہ کرنے پر زور دیا۔ اپنے چند کیسز کا حوالہ دیتے ہوئے اُنہوں نے بتایا کہ انہوں نے فاسفورس 3 کو ایک بچے کے نمونیا میں کامیابی سے استعمال کیا۔ لائیکوپوڈیم 4 ایم سے ایک بچے کے دائیں خصیئے کا ہرنیا ٹھیک کیا۔ پولیگان سیگ 4 گردے کے درد کو روکنے میں مفید پائی۔ اسی طرح ایک خستہ حال مریض کی سانس کی تنگی یعنی ڈسپنویا کوکا 6 سے ٹھیک ہوئی۔
نایاب پوٹینسیوں کو دہرانے کے متعلق ڈآکٹر صآحب نے راہنما اصول یہ بتایا کہ انہیں مرض کی شدت کے مطابق دہرانا چاہئے۔

ڈاکٹر ایل ایم خان! ہم آپ کے ممنونِ احسان ہیں کہ آپ نے ہمارے اِس اتوار کو یادگار بنا دیا۔

Related Posts

Posted in: Homeopathic Awareness, Homeopathy in Urdu, Professional Tagged:
Return to Previous Page

Leave a Reply

Your email address will not be published.

About - Hussain Kaisrani

Hussain Kaisrani, The chief consultant and director at Homeopathic Consultancy, Lahore is highly educated, writer and a blogger kaisrani.blogspot.com He has done his B.Sc and then Masters in Philosophy, Urdu, Pol. Science and Persian from the University of Punjab. Studied DHMS in Noor Memorial Homeopathic College, Lahore and is a registered Homeopathic practitioner from National Council of Homeopathy, Islamabad He did his MBA (Marketing and Management) from The International University. He is working as a General Manager in a Publishing and printing company since 1992. Mr Hussain went to UK for higher education and done his MS in Strategic Management from University of Wales, UK...
read more [...]

HOMEOPATHIC Consultants

We provide homeopathic consultancy and treatment for all chronic diseases.

Contact US


HOMEOPATHIC Consultants
Bahria Town Lahore – 53720

Email: kaisrani@gmail.com
Phone: (0092) 03002000210
Blog: kaisrani.blogspot.com
Facebook:fb.com/hussain.kaisrani
read more [...]