Best Homeopathic Medicine top Treatment by classical Homeopathic Doctors

Blog

Autism ASD ADHD Children’s Diseases Homeopathic Awareness Homeopathy in Urdu Mental Health

پیٹ کے کیڑے یا چمونے، کاغذ، ٹشو اور مٹی وغیرہ کھانا – ہومیوپیتھک دوائیں اور علاج – حسین قیصرانی۔

پیٹ کے کیڑے (چمونے) ایک عام علامت اور بیماری ہے جو کہ خاص طور پر بچوں میں پائی جاتی ہے تاہم بعض اوقات بڑے بھی اِن کا شکار ہوجاتے ہیں۔ اِن کیڑوں کی کئی اقسام ہیں: چمونے، چھوٹے سفید کیڑے، چھوٹے سفید مگر کالے منہ والے کیڑے، تھوڑے سے لمبے کیڑے، زیادہ لمبے (ملہپ) کیڑے اور کدو کیڑا وغیرہ۔ Thread Worn, Tap Worm, Round Worm, Pin worm, Hook Worm

عام طور پر سمجھا یہ جاتا ہے کہ مٹی وغیرہ یا میٹھا کھانے سے پیٹ میں کیڑے ہو جاتے ہیں تاہم برطانیہ اور یورپ کے بعض ہومیوپیتھک ڈاکٹرز اِس سے بالکل مختلف بلکہ متضاد رائے رکھتے ہیں۔ دورانِ تعلیم اِسی موضوع ۔۔ پیٹ کے کیڑے اور اُن کا ہومیوپیتھک علاج ۔۔ پر لندن میں ایک سیمینار میں شرکت کا موقع ملا جس میں یورپ، امریکہ اور برطانیہ کے ہومیوپیتھک ماہرین اور سکالرز نے میٹھا کھانے اور پیٹ کے کیڑوں کے باہمی تعلق پر اپنی تحقیقات پیش کیں۔ اُن میں سے اکثر ماہرین کا رجحان اِس طرف تھا کہ پیٹ کے کیڑوں کی اکثریت میٹھا کھانے سے بڑھتی نہیں بلکہ مرتی ہے۔ مریض جب میٹھا کھاتے ہیں تو ایسے کیڑے اپنی جان بچانے کے لئے اِدھر اُدھر نکلنے کی کوشش کرتے ہیں۔ کیڑوں کی اِس نقل و حرکت سے مریض کی بے چینی اور خارش چونکہ بے حد شدید ہو جاتی ہے سو میٹھا کھانے کی وجہ سے ظاہری علامات کے اِس طرح اچانک بڑھنے کو کیڑوں میں اضافہ سے تعبیر کیا جانے لگا۔ یہ بات ضمناً اِس لئے عرض کردی کہ پاکستان کے ہومیوپیتھک محققین اِس پہلو پر بھی غور کریں۔

قطع نظر اِس کے کہ میٹھا کھانے سے کیڑوں میں اضافہ ہو سکتا ہے یا نہیں؛ یہ دونوں صورتوں میں، بہرحال، اصل سبب نہیں ہے۔ اصل سبب موروثی مزاج ہے اور وہ بھی خاص طور پر ٹی بی یا سرطان (کینسر)۔ اول تو مٹی کھانا یا زیادہ میٹھا کھانا بذاتِ خود غیر فطری علامات و عادات ہیں ۔ اِن کا بھی کوئی نہ کوئی سبب ہوتا ہے۔ مٹی کھانے کا سبب اگر کیلشیم کی کمی کہا جائے تو یہ کمی کیوں؟ بچہ دودھ پیتا ہے اور کئی ایسی چیزیں کھاتا پیتا ہے جن میں کیلشیم موجود ہوتا ہے تو پھر کمی رہ جانے کا جواز کیا رہ جاتا ہے؟ دراصل کیلشیم جذب نہیں ہوتا اور جذب نہ ہونے کی وجہ پھر وہی موروثی مزاج ہے۔ علامات کے مطابق کسی اَور مرض کا علاج کرتے ہوئے ہومیوپیتھک ادویات سورینم یا بسیلینم یا ٹیوبرکولینم دینے سے بہت سے کیڑے پاخانہ کے ساتھ خارج ہوتے مریضوں نے دیکھے ہیں — اور ایسے مریضوں کا موروثی مزاج یا تو سرطانی (کینسر) تھا یا مدقوق (ٹی بی)۔
اہم بات سمجھنے کی یہ بھی ہے کہ عام دواؤں سے (چاہے وہ ہومیوپیتھک ہوں یا ایلوپیتھک یا ٹوٹکے وغیرہ) کیڑے نکالنے کا فائدہ زیادہ دیرپا ثابت نہیں ہوتا کیونکہ اِن ادویات سے جسم میں کیڑوں کی افزائش کا ماحول یعنی مریض کا مزاج تبدیل نہیں ہو پاتا۔ علاج کا باقاعدہ اور مستقل طریقہ صرف یہی ہے کیس کو اچھی طرح سمجھ کر ایسی دوا کا اِنتخاب کیا جائے کہ جو پیٹ کے اندرونی ماحول کو کیڑوں کی رہائش اور افزائش  کے لئے ناقابلِ برداشت بنا دے۔
ہومیوپیتھک ادویات کلکیریا کارب یا الیومینا دینے سے بچے مٹی وغیرہ کھانا چھوڑ جاتے ہیں۔ اِن دواؤں کی پیٹ کے کیڑوں کے ضمن میں یہ علامات قابلِ غور ہونی چاہئیں کہ کلکیریا کے مریض کا پاخانہ ڈھیلا ہوتا ہے اور الیومینا کے مریض کو اکثر قبض کی شکایت رہتی ہے۔ اِس تشخیص کو پیشِ نظر رکھ کر دوا دینی چاہئے۔
بعض اوقات ان دواؤں ہی سے مزاج بدل جاتے ہیں بشرطیکہ مریض مٹی وغیرہ کھانا چھوڑ دے۔ لیکن اکثر دیکھا گیا ہے کہ کچھ عرصہ بعد مریض پھر سے مٹی کھانے لگتے ہیں۔ ایسی صورت میں مزاج کی تبدیلی کے لئے حسبِ علامت کسی نوزوڈ کی ضرورت لاینفک ہو جاتی ہے۔۔۔ خاص طور پر وہ نوسوڈز جن کا اوپر ذکر کیا گیا ہے۔
ذکر کیڑوں کا ہو رہا تھا مٹی وغیرہ کھانے کی بات بیچ میں آ گئی۔ یہ اچھا ہی ہوا۔ ایسے بچے یا بڑے جو مٹی وغیرہ کھاتے ہیں یا جن کے پیٹ میں کیڑے اور چمونے وغیرہ پرورش پا رہے ہوں، ہومیوپیتھک علاج سے اُن کا مزاج بدلنا بے حد ضروری ہوتا ہے۔ اگر اُن بچوں کا موروثی مزاج بدل دیا جائے تو وہ مستقبل میں کئی خبیث، موذی اور خطرناک اَمراض سے محفوظ ہو جاتے ہیں۔
پیٹ کے کیڑوں کو خارج کرنے کے لئے عام اِستعمال کی جانے والی اَدویات مندرجہ ذیل ہیں:
سائنا۔ ٹیوکریم ۔ سنٹونن۔ کلکیریا کارب۔ نیٹرم فاس۔ سٹینم۔ کیوپرم آکس نگx 1
میرے تجربے کے مطابق کیوپرم آکس نگ (یہ دوائی پاکستان میں شاید ہی کسی ہومیوپیتھک سٹور سے مل سکے۔ یورپ اور خاص طور پر برطانیہ کے ہومیوپیتھک ڈاکٹرز اِس کے بہت قائل ہیں؛ اِس لئے وہاں یہ عام دستیاب ہو جاتی ہے) تمام قسم کے کِرم (کیڑے) ختم کر دیتی ہے۔ نکس وامیکا ۳۰ کے ساتھ باری باری دینے سے کدو کیڑا تک بھی ختم ہو جاتا ہے۔ مگر اگر کیڑے دوبارہ پیدا ہو جائیں تو پھر حسبِ علامت نوزوڈ (Nosodes) کا اِستعمال بہت ضروری ہو جاتا ہے۔ اِس صورتِ حال میں اپنے اعتماد کے ہومیوپیتھک ڈاکٹر سے مشورہ کر کے باقاعدہ علاج کروائیں۔
—————-

(اکثر پوچھا جاتا ہے کہ اگر ہومیوپیتھک کنسلٹینسی کے ذریعہ علاج کروانا چاہیں تو کیا طریقہ ہو سکتا ہے۔ اِس ضمن میں عرض یہ ہے کہ اپنا کیس ڈسکس کرنے کے لیے فون کر کے وقت طے کر لیا جائے۔ تفصیلی کیس انٹرویو کے بعد دوائی بذریعہ ڈاک / کورئیر بھجوا دی جاتی ہے۔
حسین قیصرانی فون نمبر 03002000210)۔

Write a Comment