29 11, 2020

The Soul of Remedies by Dr Rajan Sankaran

By |2020-11-29T15:14:34+05:00November 29, 2020|Categories: Professional|0 Comments

Introduction For a long time I hesitated to write a book on remedies because I am well aware of the dangers inherent in such an undertaking. In the first place, there is a strong possibility that the reader, especially if he is a beginner in the field, might become fixed on these remedy pictures and forget that every remedy has a wider range and greater scope than any one individual can see or describe. Not realising that these pictures represent only one version, only one view of the remedy, he might wrongly imagine that he had seen the whole. I also realise that an idea imperfectly communicated which might easily be corrected in a "Live" teaching situation, is far less easily rectified when it has been committed to print. Finally there is a danger that the reader's Materia Medica may be narrowed down to the limited number of remedies described here; it may create a tendency to try to fit all patients into one of these pictures; thus young practitioners might fail to make the unprejudiced search through the Repertory or the more complete Materia Medica which the best prescribing requires. However, in the last two or three years, my [...]

15 11, 2020

صحت و سلامتی کی طرف واپسی – الحمد للہ – حسین قیصرانی

By |2020-11-15T13:00:31+05:00November 15, 2020|Categories: Homeopathic Awareness, Homeopathy in Urdu, Respiratory|0 Comments

اکتوبر کا مہینہ تعلیمی سرگرمیوں اور کچھ سیر و تفریح کی وجہ سے مسلسل سفر میں گزرا۔ اس دوران میں بے شمار لوگوں سے ملنا ملانا بھی رہا۔ سخت سردی بلکہ برف باری میں وقت گزرا تو کہیں پسینہ سے شرابور کیفیت سے دوچار رہے۔ کہیں کرونا کے اثرات کی گونج رہی تو کہیں جیسے اس کی کچھ خبر ہی نہیں تھی۔ اس بھاگ دوڑ، میل ملاپ اور دعوتوں خدمتوں میں کچھ ایسا ہوا کہ جو عام نزلہ زکام، کھانسی، گلا خرابی، مسلسل چھینکوں، سردی وغیرہ سے زیادہ اور مختلف تھا۔ خود کو الگ تھلگ کرنے تک گھر کے افراد میں بھی ایسی ہی کیفیات نمودار ہونا شروع ہو گئیں۔ اللہ کا کرم ہوا کہ علاج کے دو تین دن بعد ہی سے دوسرے افراد نارمل ہو گئے۔ اپنے آپ کو علیحدہ کر لیا ہوا تھا۔ پروردگار کے کرم، فیملی کی خوب خاطرداری اور اپنے علاج سے اگرچہ صورتِ حال مکمل کنٹرول ہو گئی تاہم اپنا علاج میرے اپنے لئے کوئی خاص مفید نہ ہو پا رہا تھا۔ میرا خیال تھا کہ یہ ایسے ہی چلے گا اور ہفتہ دس دن بعد ہی واضح بہتری کا امکان ہو سکے گا۔ اس دوران ڈاکٹر بشرہ خان صاحبہ نے کسی حوالہ سے [...]