Blog2021-01-28T00:08:44+05:00

گندم گلوٹن دودھ الرجی اور معدہ کے شدید مسائل۔ کامیاب علاج ۔ آن لائن مریض کا فیڈبیک

میں آج بہت خوش ہوں۔ مجھے یقین ہی نہیں آ رہا کہ میں سب کچھ کھا سکتا ہوں خاص طور پر گندم کی روٹی، جسے کھانے کو میں ترس گیا تھا۔ میں نے دو سال تک ڈاکٹروں کے چکر لگائے ہر طرح کے ٹیسٹ کروائے دن رات دوائیاں کھائیں لیکن کسی بھی چیز نے کوئی فائدہ نہ دیا۔ 2018 میں عید پر دوستوں کے ساتھ گھومنے گیا کھانے کے دوران معدے میں تکلیف شروع ہوئی اور میرا مشکل وقت شروع ہوا۔ اینڈوسکوپی (Endoscopy) کے بعد ڈاکٹروں نے ایچ پائیلوری (Helicobacter pylori – H. pylori) کا مسئلہ بتایا۔ میں دوائیاں کھاتا رہا۔ مسائل بہت بڑھے تو ڈاکٹرز نے گندم الرجی (wheat, Gluten Allergy) بتائی اور گندم کھانے سے روک دیا۔ میں نے پھر بہت علاج کروایا فارن ڈاکٹرز سے بھی رابطہ کیا لیکن کسی کے پاس کوئی حل نہیں تھا۔ میرے مسائل اتنے بڑھ گئے کہ زندگی ایک بوجھ بن گئی۔ میں گندم نہیں کھا سکتا تھا۔ کوئی بسکٹ رس بیکری کی باقی چیزیں سب منع تھیں۔ شائد پڑھنے یا سننے میں یہ بات اتنی عجیب نہ لگتی ہو لیکن اس طرح زندگی گزارنا بہت اذیت دیتا تھا۔ میں مکئی کی روٹی کھاتا تھا یا پھر ابلے چاول۔ لیکن اتنے پرہیز کے باوجود میں ٹھیک نہیں تھا۔ معدے میں درد رہتا۔ گیس ٹربل ہر وقت اور معدہ سوج جاتا تھا۔ ڈکار آنے لگتے پیچش لگ جاتے۔ پیٹ میں ہر وقت گڑ گڑ کا طوفان مچا رہتا تھا۔ کھانا کھاتے ہی پسینے آنے لگتے۔ سر اور چہرہ پسینہ پسینہ ہو جاتا تھا۔ [...]

پہلا ایرانی آن لائن مریض، فارسی اور ہومیوپیتھی ۔ حسین قیصرانی

تین ماہ قبل جب کرونا وائرس اور اُس کے مسائل نے زور پکڑا تو جہاں دنیا بھر میں ہومیوپیتھی کا خوب چرچا ہوا وہاں ایرانی باشندوں نے بھی ہومیوپیتھی میں خاصی دلچسپی لی۔ مجھے بھی کافی کالز اور میسیجز کرونا کے علاج کی بابت موصول ہوئے۔ ظاہر ہے کہ سب کو معذرت ہی کی کہ کرونا وائرس کے علاج کا، ہر ملک کا اپنا پروٹوکول ہوتا ہے اور علاج کے لئے گورنمنٹ کے اصول و ہدایات پر عمل کرنا چاہئے۔ ان رابطوں میں سے چند ایک نے اپنے جسمانی، جذباتی، ذہنی اور نفسیاتی مسائل پر بات کی اور اس وقت چار ایرانی مریض آن لائن ہومیوپیتھک علاج شروع کر چکے ہیں۔ پہلا ایرانی مریض بہت اذیت ناک مسائل سے دوچار ہے۔ ڈر، خوف اور فوبیا جیسے نفسیاتی مسائل کے ساتھ ساتھ اُن کا ایک اہم ترین مسئلہ یہ بھی ہے کہ وہ ہم جنس پرستی (Homosexuality) کا شکار ہے۔ علاج جاری ہے۔ دعا کریں کہ پروردگار اُن کی مشکلات حل کرنے میں میری مدد فرمائے۔ والد محترم علامہ ارشد قیصرانی دیگر کئی زبانوں کے علاوہ فارسی اور عربی کے ماہر سمجھے جاتے ہیں۔ حدیث اور فقہ کے ساتھ ساتھ عربی فارسی کی بنیادی تعلیم بھی والد محترم نے مجھے بچپن میں ہی دے دی تھی۔ زندگی کی جوئے رواں کے ساتھ بہتے بہاتے جب لاہور پڑاو پڑا تو ڈاکٹر محمد سلیم مظہر (موجودہ پرو وائس چانسلر پنجاب یونیورسٹی @Mohammad Saleem Mazhar) سے دوستداری عروج کو پہنچی تو انہوں نے نہ صرف فارسی زبان و ادب کی باقاعدہ خود تعلیم دی [...]

By |May 17, 2020|Categories: Mental Health|0 Comments

آنکھیں (آئیز) (چشم ‘آنکھ) EYES آنکھوں کی ساخت بڑی پیچیدہ ہے۔ اس کے تفصیلی بیان کے لئے ایک مکمل کتاب کی ضرورت ہے۔ اسی طرح آنکھ کے امراض بھی بڑے پیچیدہ اور زیادہ ہیں۔ امراض چشم و بینائی کے ان امراض کا ذکر کیا جاتا ہے جن سے عام واسطہ پڑتا ہے۔ آشوب چشم: یہ بہت عام تکلیف ہے جو عموماً بچوں بچوں میں زیادہ ہوتی ہے۔ اسے آنکھ دکھنا یا آنکھ آنا بھی کہا جاتا ہے۔ اس کیفیت میں مریض کو ٹھنڈی ہوا اور ٹھنڈا پانی سکون دیتا ہے۔ آنکھوں کے پیوٹے گد کی وجہ سے چیک جاتے ہیں خاص طور پر صبح کے وقت جس کی وجہ سے آنکھیں کھلتی نہیں۔ آنکھیں پانی سے دھونا اور صاف کرنا پڑتی ہیں۔ ہومیوپیتھک دوا پلساٹلا () ان مسائل میں بہت مفید ہوتی ہے۔ آنکھیں زیادہ سرخ اور درد ہو تو : بیلا ڈونا ()۔ آنکھیں سرخ ہوں، جلن والا پانی بھی نکلے تو: یوفریزیا ()۔ روہے یا ککرے () جس میں آنکھوں کے پپوٹوں کے اندر والے حصے میں ابھار یا دانے ہو جاتے ہیں تو اِس مرض کو سنجیدگی سے علاج کی ضرورت ہوتی ہے۔ عام طور پر تھوجا () سے واضح بہتری آ جاتی ہے۔ یہ تکلیف اگر بار بار ہو تو یہ سفلس () یا سائکوسس () میازم اور مزاج کی وجہ سے ہو سکتا ہے۔ مریض کی تفصیلی کیس لے کر مزاجی دوا () ہی مستقل فائدہ دے سکتا ہے۔ ہومیوپیتھک نوزوڈ ہیپوزینم () کی ایک یا دو خوراکوں سے چند دن کے اندر واضح بہتری [...]

By |May 15, 2020|Categories: Uncategorized|0 Comments

مردوں کے مسائل، بے اولادی اور کمزوریاں ۔ ہومیوپیتھک دوائیں اور علاج ۔ حسین قیصرانی

بہت اہم نوٹ: اس آرٹیکل میں بتائی گئی تمام دوائیاں بہت گہری اور لمبا عرصہ کام کرتی ہیں۔ ڈاکٹرز سے کیس ڈسکس کئے بغیر اِن کا لمبا استعمال فائدہ تو کوئی نہیں دے سکتا لیکن گردوں کو مکمل فیل کر سکتا ہے۔ مریض اپنا علاج خود نہ کریں بلکہ اعتماد کے ڈاکٹر سے کروائیں۔ یہ بھی یاد رکھیں ایسی کمزوریوں کا علاج کم از کم چھ سات ماہ تک چلتا ہے تو ہی واضح بہتری ہوتی ہے۔ جو لوگ جلد بازی میں ہوتے ہیں اور پوچھ پاچھ کر دوائی استعمال کرنا چاہتے ہیں، ہومیوپیتھک ٹاپ اور کامیاب دوائیں بھی اُن کو ذرہ برابر بھی فائدہ نہیں دیا کرتیں۔ اس لئے یہاں کسی کمنٹ یا دوائی پوچھنے کا ریسپانڈ نہیں دیا جا سکے گا۔ ------------ ایک وقت میں صرف ایک ہی دوا بھی ہومیوپیتھی کا بنیادی اصول ہے۔ اس میں آلہ تناسل یعنی نفس، خصئے، پراسٹیٹ گلینڈ اعضاء ہیں۔ پراسٹیٹ مذی پیدا کرتا ہے جس کی وجہ سے شہوت بیدار ہوتی ہے۔ خصئے منی پیدا کرتے ہیں جو مادہ تولید ہے۔ یہ مادہ بذریعہ آلہ تناسل خارج ہوتا ہے۔ جنسی بلوغت تقریباً بارہ برس کی عمر میں نمودار ہوتی ہے۔ نسل جاری رہنے  کا یہ نظام حیوانی ہے۔ اس میں انسان اور حیوان برابر ہیں۔ فرق صرف یہ ہے کہ حیوان جبلی طور پر یہ فعل کرتا ہے اور انسان خواہش اور ارادے سے کرتا ہے۔ انسان پوشیدگی میں کرتا ہے اور حیوان سر عام کرتا ہے۔ انسان پوشیدگی شرم و حیاء کی وجہ سے اختیار کرتا ہے جو حیوان میں [...]

ذہنی صحت: کوئی شخص نفسیاتی مریض یا سائیکوپیتھ کیسے بنتا ہے؟ ۔ بی بی سی رپورٹ

پرتشدد سائیکوپیتھ کو اپنے کام کے نتائج پر افسوس نہیں ہوتا پروفیسر جیمز فیلن ایک نفسیاتی مریض ہیں اور ماہر علم الاعصاب ہونے کی وجہ سے انھوں نے حیرت انگیز طور اپنے مرض کی خود تشخیص کر لی۔ پروفیسر فیلن یونیورسٹی آف کیلیفورنیا اروین کیمپس میں علم نفسیات اور انسانی برتاؤ کے پروفیسر ہیں۔ وہ ایک تجربہ کر رہے تھے جس میں وہ قاتلوں کے دماغ کے سکین کا تجزیہ رہے تھے اور کنٹرول گروپ کے طور پر اپنے خاندان کے افراد کو استعمال کر رہے تھے۔ جب انھوں نے آخری سکین دیکھا تو اس کے بارے میں انھوں نے کہا کہ ’یہ واضح طور پر پیتھالوجیکل ہے‘، یعنی اس میں مرض صاف ظاہر ہے۔ انھوں نے بی بی سی کو بتایا کہ جب انھوں نے یہ کہا تو جو ٹیکنیشن ان کے پاس سکین لے کر آئے تھے انھیں گھورنے لگے۔ انھوں نے کہا: 'میرا خيال تھا کہ وہ مجھ سے مذاق کر رہے ہیں۔ میں نے کہا کہ میں سمجھ گیا، تم نے ایک قاتل کو میرے اہل خانہ کے ساتھ خلط ملط کر دیا ہے۔ لیکن انھوں نے جواب دیا کہ 'یہ حقیقی ہے۔' ’اس لیے میں نے کہا کہ یہ شخص خواہ کوئی بھی ہو، اسے کھلے بندوں سماج میں گھومنے کی اجازت نہیں ہونی چاہیے۔ شاید یہ بہت ہی خطرناک آدمی ہے۔ آج تک میں نے جتنے کیسز دیکھے ہیں، ان میں سب میں سے اس کے اندر سب سے خراب نفسیاتی مرض کا رجحان ہے۔‘ 'اس لیے میں نے وہ ٹیگ کھینچا جس پر [...]

By |May 12, 2020|Categories: Mental Health|0 Comments

کمزوری سستی لاغر جسم سوکھا جسم – ہومیوپیتھی دوائی اور علاج – حسین قیصرانی

کمزوری ‘ضعف ڈیبیلٹی‘ ویکنس DEBILITY WEAKNESS ۔ کمزوری چاہے وقتی ہو یا پرانی؛ اس کا کوئی نہ کوئی سبب ہوتا ہے۔ کئی بچے پیدا ہی کمزور ہوتے ہیں۔ پیدائش کے وقت سے ہی کمزوری ہو تو وجہ والدین زیادہ تر سبب والدین ہوتے ہیں۔ دونوں یا دونوں میں سے ایک۔ ایسے بچوں کے کمزور پیدا ہونے کا سبب موروثی مزاج ہی ہو سکتا ہے۔ دوا سبب کے مطابق بچے کو دیں اور والدین کو بھی ۔ تا کہ آئیندہ بچے صحت مند پیدا ہوں۔ اکثر ایسے بچے سوکھے (راسمں ) میں مبتلا ہوتے ہیں۔ یا ہو جاتے ہیں۔ ایسے بچے زیادہ تر  اللہ تعالیٰ کے کرم سے ہومیوپیتھک دوائی ٹیو بر کیو کینم ۳۰ یا ۲۰۰ سے شفا یاب کئے ہیں ۔یہ مرض دراصل ٹی بی ہے جو پہلے آنتوں پر اثر انداز ہو تا ہے۔ اور پھر پھیپھٹروں پر ۔ بچے کو عموما اسہال کی شکایت رہتی ہے۔ اور بعض اوقات بخار بھی ہوتا ہے ۔ ضروری نہیں ۔ اس سے ثابت ہوتا ہے کہ موروثی مزاج ٹی بی ہے   حسین قیصرانی – سائیکوتھراپسٹ & ہومیوپیتھک کنسلٹنٹ – لاہور، پاکستان فون نمبر 03002000210۔

By |May 12, 2020|Categories: Children's Diseases|0 Comments

کمزور لاغر جسم، پچکے گال، معدہ خرابی، شدید غصہ، انگزائٹی، ڈپریشن ۔ کامیاب کیس، دوا اور علاج ۔ حسین قیصرانی

ساری تیاریاں مکمل تھیں۔ دعوت نامے تقسیم ہو چکے تھے۔ وہ خاصا مطمئن تھا۔ آج اس کی بہن کی مہندی تھی۔ یہ ایک بڑی ذمہ داری تھی اور وہ پُر اعتماد تھا۔ اسے ایک بھائی ہونے کے ساتھ ساتھ باپ کا کردار بھی نبھانا تھا۔ جہیز کا سامان جا چکا تھا۔ بارات کے استقبال سے لے کر پُرتکلف دعوت اور رخصتی تک، سارے انتظامات ہو چکے تھے۔ کالج چھوڑنے کے بعد سے لے کر اب تک کا سارا سفر اس کی نگاہوں کے سامنے گھوم رہا تھا۔ یہاں تک آنے کے لیے اس نے بہت محنت کی تھی۔ وہ انہی سوچوں میں گم تھا جب فون کی بیل اسے خیالوں کی دنیا سے واپس لے آئی۔ موبائل کی سکرین پر دلہے کے والد کا نمبر تھا۔ شور سے بچنے کے لیے وہ گھر سے باہر نکل گیا تاکہ تسلی سے بات ہو سکے۔ لیکن اگلے ہی لمحے اس پیروں کے نیچے زمین تھی نہ سر پہ آسمان ۔۔۔۔۔۔! مسٹر X نے ساہیوال سے کال کی اور بتایا کہ ان کی عمر 23 سال ہے۔ وہ ایک بزنس مین ہونے کے ساتھ ساتھ درمیانے درجے کے زمیندار بھی ہیں۔ پچھلے دو سال سے ہومیوپیتھک ادویات اور آن لائن علاج کے حوالے سے سرچ کر رہے تھے۔ اس پیج پر کیسز پڑھنے کے بعد رابطہ کرنے کا فیصلہ کیا۔ صورت حال کافی پریشان کن تھی کیونکہ ان میں اب زندہ رہنے کی خواہش نہیں تھی۔ جسمانی اور نفسیاتی حالت ابتر تھی۔ ذہنی تناؤ اور ذمہ داریوں کے بوجھ نے ان کی شخصیت [...]

ہڈیوں کے امراض ۔ ہومیوپیتھک دوا اور علاج ۔ حسین قیصرانی

ہڈیوں کی عام تکلیفیں مندرجہ ذیل ہیں: ہڈیوں کی پرورش کا ناقص ہونا ہڈیوں کا ٹیڑھا ہونا ہڈیوں کا بڑھ جانا ہڈیوں کا بوسیدہ ہو جانا ہڈیوں کا نرم ہو جانا ہڈیوں کی ورمی کیفیات ہڈیوں کا درد ہڈیوں کی ٹی بی ہڈیوں کا کینسر یا سرطان ہڈیوں کے امراض کے بے شمار اسباب میڈیکل لٹریچر میں بیان کئے گئے ہیں۔ علاج کے لئے دوائیں بھی دستیاب ہیں اور سرجری آپریشن بھی بہت زیادہ ہو رہے ہیں لیکن، سوائے حادثات اور بیرونی چوٹوں کے، بہت کم ایسا ہوتا ہے کہ علاج مستقل اور کامیاب ہو۔ ہڈیوں کے اکثر امراض موروثی مزاج کی وجہ سے پیدا ہوتے ہیں۔ فیملی ہسٹری میں سفلس، ٹی بی یا کینسر کا ہونا پایا جاتا ہے۔ آتشک یعنی سفلس سب سے زیادہ اہم وجہ ہے۔ مریض کی ذاتی ہسٹری، مزاج اور فیملی ہسٹری کو خوب اچھی طرح سمجھ کر ضروری ہومیوپیتھک نوزوڈز استعمال کروانا بے پناہ اچھے نتائج دیتا ہے۔ اِن نوسوڈز کو ضرورت کے مطابق مگر لمبے وقفے سے دینا درد، تکلیفوں کے ساتھ ساتھ ہڈیوں میں جاری خرابی کو کنٹرول کر لیتا ہے۔ علامات کے مطابق باقی دوائیوں کی بھی بہت اہمیت ہے۔ ہڈیوں کے امراض کے مستقل علاج کے لئے مریض کا تفصیلی کیس لینا بے حد ضروری ہوتا ہے۔ ایک ماہر ہومیوپیتھک ڈاکٹر تیس چالیس منٹ انٹرویو کے بعد مریض کے میازم، مزاج، ذاتی اور خاندانی ہسٹری کو سمجھ کر کوئی ایک نوزوڈ منتخب کرتا ہے۔ ہومیوپیتھک نوزوڈز بہت ہی گہرائی میں پہنچ کر کام کرتے ہیں اور لمبے عرصہ تک اپنے [...]

یرقان، ہیپاٹائٹس اور جگر کی خرابی ۔ ہومیوپیتھک دوا اور علاج ۔ حسین قیصرانی

 یرقان (Jaundice) کا عارضہ جگر میں خرابی کی وجہ سے ہوتا ہے۔ خون میں زہریلے مواد جگر اپنے اندر جمع کرتا ہے۔ اس مواد سے صفرا پیدا کر کے پتہ میں پہنچتا ہے تو ضرورت کے مطابق صفراء معدہ میں داخل کرتا ہے۔ اس سے غذا ہضم ہونے میں مدد ملتی ہے۔ خرابی جگر سے یہ صفراء مطلوبہ مقدار میں معدہ میں نہ پہنچے تو خون میں داخل ہو جاتا ہے جس سے پاخانہ کا رنگ و سفید ہو جاتا ہے۔ اور جسم جلد کا رنگ، آنکھیں وغیرہ پتلی ہو جاتی ہیں۔ اگر یہ صفرا جگر کی خرابی کے باعث معدہ میں زیادہ چلا جائے تو پاخانہ (Stool) کا رنگ سیاہی مائل یا سیاہ ہو جاتا ہے۔ اس لئے اسے کالا برقان (Hepatitis) کہتے ہیں۔ یہ بعض اوقات خطرناک ہو کر جان لیوا ثابت ہوتا ہے۔ یرقان بہت چھوٹے بچوں سے لے کر بوڑھوں تک کو ہو سکتا ہے۔ اگر بار بار ہو تو یہ بہت زیادہ فکرمندی کی بات ہے کیوں کہ اس طرح سرطان یعنی کینسر (Cancer) کا خطرہ ہوتا ہے۔ ایسے مریض کے علاج میں بہت ہی زیادہ احتیاط کی ضرورت ہوتی ہے۔ ہومیوپیتھک ڈاکٹر کو چاہئے کہ وہ مکمل کیس لے کر مریض کے موروثی مزاج کو سمجھ کر علاج کرے تو مریض کا یرقان بھی ٹھیک ہو سکتا ہے اور اُسے کینسر کی طرف جانے سے بچانے کی کوشش کی جا سکتی ہے۔ نومولود بچوں کے لئے مرکسال (Mercurius solubilis 30) کی صرف ایک خوراک کافی ہے۔ ایک دو دن میں یرقان کے اثرات ختم [...]

موٹاپا ۔ 35 کلوگرام وزن کم ۔۔ شوگر، بلڈ پریشر، پینک اٹیک، انگزائٹی، شدید کھانسی اور معدہ خرابی مکمل کنٹرول ۔ کامیاب کیس، دوا اور علاج ۔ حسین قیصرانی

اٹک کے رہائشی، دو بچوں کے والد، چالیس سالہ احمد زمان (مریض کی خواہش پر نام دیا جا رہا ہے)، پیشے کے لحاظ سے معلم ہیں۔ جاسوسی کہانیاں پڑھنے کے شوقین ہیں۔ موٹاپے کی وجہ سے بہت پریشان تھے۔ پہلے بھی ہومیوپیتھک علاج (Homeopathic Treatment) کروا چکے تھے لیکن کوئی خاطر خواہ فائدہ نہیں ہوا تھا۔ ویب سائٹ پر کیسز پڑھنے کے بعد رابطہ کیا۔ ان کے مطابق، سب سے بڑا مسئلہ بڑھتا ہوا وزن تھا جو کسی بھی طرح کنٹرول نہیں ہو رہا تھا۔ مستقل خشک کھانسی نے بھی تنگ کر رکھا تھا۔ معدہ اکثر خراب رہتا تھا۔ ساتھ ہی انزائٹی (Anxiety) اور پینک اٹیک (Panic Attack) بھی ہوتے تھے۔ گھنٹہ بھر تفصیلی انٹرویو کے بعد اور اگلے چند سیشن میں یہ مسائل بھی سامنے آئے۔ 1 ۔بھوک بہت شدید (extreme hunger) لگتی تھی۔ شدت کا ندیدہ پن (pinched for food) رہتا تھا اور کبھی بھوک مٹنے کا احساس نہیں ہوتا تھا۔ کھانے پر درندوں کی طرح ٹوٹ پڑنے کی عادت تھی۔ بڑے بڑے نوالے بغیر زیادہ چبائے نگل لیتے تھے۔ کافی مقدار میں کھانے (over eating) کے باوجود پیٹ نہیں بھرتا تھا۔ روزے نہیں رکھ پاتے تھے۔ 2۔سستی  (laziness) بہت زیادہ رہتی تھی۔ کسی کام کو دل نہیں کرتا تھا۔ ایک کلومیٹر کے فاصلے پر بھی بائیک یا گاڑی پر جاتے تھے۔ چلنے پھرنے کی طرف طبیعت مائل نہیں ہوتی تھی۔ قریب پڑا ہوا پانی بھی خود نہیں پیتے تھے بلکہ دل کرتا تھا کہ کوئی اور پانی پلا دے۔ سکول میں پڑھانے کو جی نہیں چاہتا تھا۔ 3۔ پیاس شدید لگتی تھی۔ بڑے بڑے گھونٹ لینے کی عادت تھی۔ ایک [...]

پیٹ کے کیڑے، چمونے یا چنونے ۔ ہومیوپیتھک دوا اور علاج ۔ حسین قیصرانی

   پیٹ کے کیڑے، چمونے یا چنونے ۔ ہومیوپیتھک دوا اور علاج ۔ حسین قیصرانی ویڈیو اردو یوٹیوب

By |April 13, 2020|Categories: Children's Diseases, Digestive System, videos|0 Comments

چہرے کے کیل، دانے، مہاسے، ایکنی، پمپل ۔ ہومیوپیتھک دوا اور علاج ۔ حسین قیصرانی

جلد (Skin) پر کہیں بھی کچھ نکلے تو اس کا مطلب ہے کہ خون میں غلیظ مواد بن رہا ہے جسے مدافعتی نظام (Immune System) باہر نکال رہا ہے۔ بلوغت میں پہنچ کر اکثر بچے بچیوں کو چہرہ یا منہ پر باریک، موٹے یا پیپ والے دانے نکلتے ہیں۔ عام زبان میں انہیں کیل، دانے یا مہاسے کہتے ہیں۔ انہیں اوپر سے کچھ لگا کر ختم (Suppress) کرنے کی کوشش بالعموم کامیاب نہیں ہوتی بلکہ اس طرح سپریس کرنے سے امیون سسٹم (immune System) ڈسٹرب ہو جائے تو پھر یہ سلسلہ سالوں تک چلتا ہی جاتا ہے۔ کوئی علاج حتیٰ کہ ٹاپ لیزر تھراپی سے بھی یہ کیل دانوں کا معاملہ نہیں رکتا۔ بہت سارے نوجوان کیل مہاسوں اور دانوں کا علاج کرتے کرواتے جذباتی اور نفسیاتی مسائل مثلاً ڈپریشن، سٹریس اور انگزائٹی کا شکار ہو جاتے ہیں۔ ہومیوپیتھی میں اس کا علاج سادہ ہے اگر شروع میں ہی اِسے اختیار کر لیا جائے۔ ہومیوپیتھک دوا سے ایکنی (Pimples / Acne) کو نکال کر ختم کیا جاتا ہے نہ کہ دبا کر۔ اس بات کی سمجھ نہ ہونے کی وجہ یا کیل دانے صرف تین دن میں ختم کرنے کی گارنٹی دینے والے اشتہارات سے متاثر ہو کر نوجوان توقع کرتے ہیں کہ صبح آٹھتے ہی چہرہ سکن صاف ہو۔ علاج میں تین چار ماہ لگ سکتے ہیں تاکہ خون کی خرابی مکمل طور پر باہر نکل جائے۔ کیل دانے اگر سادہ ہوں اور دو تین ماہ سے شروع ہوئے ہوں تو ہومیوپیتھک دوا اینٹی مونیم کروڈم (Antimonium Crudum 30) [...]

By |April 11, 2020|Categories: Skin and Hair|0 Comments

بالوں کے مسائل ۔ بال گرنا، سفید، خشکی اور ڈینڈرف ۔ ہومیوپیتھک دوائیں ۔ حسین قیصرانی

بال گرنا آج کل اتنا عام ہے کہ تقریباً ہر دوسرا انسان بالخصوص ہر دوسری خاتون اس مسئلے کا شکار ہے۔ یہ علامت عام طور پر بالوں کو اپنی غذائیت نہ ملنے کے سبب پیدا ہوتی ہے۔ سر میں خشکی، سکری اور بفہ (Dandruff) پیدا ہونے سے بھی بال گرنے لگتے ہیں۔ مستقل خارش، کھجلی اور جلد کی بیماریاں بھی بال گرنے کا سبب بنتی ہیں۔ بعض مرض مثلا ٹائیفائڈ بخار یا کینسر کیموتھراپی کے بعد بھی سر بلکہ تمام بدن کے بال گر سکتے ہیں۔ بال گرنے کا کامیاب، صحیح اور مستقل علاج تب ہی ہو سکتا ہے کہ جب اس کے پیچھے جاری سبب یا وجہ کو ڈھونڈ کر سمجھا اور حل کیا جائے۔ بالوں کے گرنے کی بے شمار وجوہات ہو سکتی ہیں تاہم پاکستان کے ماحول اور کلچر میں جو عام دیکھی ہیں وہ یہ ہیں: ڈپریشن، انگزائٹی، ٹینشن، نزلہ زکام الرجی، دوائیوں کا لمبا استعمال، جذبات کو سپریس کرنا، بہت زیادہ حساسیت، شدید غم دکھ میں ہونا یا گزرنا، نوجوانی کی غلط کاریاں، مینوپاز، تھائیرائیڈ کے مسائل، مستقل سر درد، میگرین، ہارمون کی خرابی، لیکوریا، نیند کی کمی، حمل، بچے کی پیدائش اور دودھ پلانے کے دوران۔بال گرنے یا مردوں میں گنجہ پن کا سبب موروثی مزاج بھی ہوتا ہے۔ ہومیوپیتھی حوالہ سے زیادہ تر آتشکی مزاج (Syphilitic Miasm) یا میازم ہوتا ہے۔ سر کے بالوں کا صفایا ہو جائے، بالچر یا ایلوپیشیا (Alopecia areata) تو بھی یہی مزاج ہوتا ہے۔بال قبل از وقت سفید ہونے کی شکائت بھی بہت زیادہ ہے۔ عین جوانی میں [...]

By |April 10, 2020|Categories: Homeopathy in Urdu, Skin and Hair|0 Comments

موٹاپا ۔ 35 کلوگرام وزن کم ۔۔ شوگر، بلڈ پریشر، پینک اٹیک، انگزائٹی، شدید کھانسی اور معدہ خرابی مکمل کنٹرول ۔ فیڈبیک ۔ احمد زمان اٹک۔

  مکمل کیس اور تفصیلات کے لئے یہاں کلک کریں۔ احمد زمان صاحب کا فیڈبیک میری ڈاکٹر حسین قیصرانی سے شناسائی سوشل میڈیا کے ذریعے 2018میں ہوئی۔ میں ویب سائٹ پر ان کے کیسز پڑھتا رہا اور اپریل 2019 میں علاج کے لیے رابطہ کیا۔ اس وقت میرا وزن 135 کلوگرام تھا اور کمر کا سائز 54 انچ۔ میں بیک وقت شوگر، بلڈ پریشراور معدے کے لیے صبح شام کئی ایلوپیتھک ڈرگز کا استعمال کر رہا تھا مگر میرے مسائل کم ہونے کی بجائے مزید بڑھ  رہے تھے۔ مستقل شدید خشک کھانسی اور جلد کے اندر محسوس ہونے والی خارش بہت تکلیف دہ تھی۔ الحمدللہ ڈاکٹر صاحب کے علاج سے میرے اکثر مسائل مکمل طور پر حل ہو چکے ہیں اور میں بالکل ایک نئے انداز کا انسان بن چکا ہوں۔ مجھے یہ تفصیل شئیر کرتے ہوئے بہت خوشی محسوس ہو رہی ہے۔ 1۔ میرا بہت آگے نکلا ہوا پیٹ واپس اپنے مقام پر آ چکا ہے۔ بے پناہ موٹاپا اب ختم ہو گیا ہے۔ میں نے 35 کلوگرام سے زائد وزن کم کیا ہے اور میری کمر کا سائز 54 انچ سے کم ہو کر 38 انچ ہو گیا ہے۔ 2۔ پہلے میں کھانے پینے میں شدید ندیدے پن کا شکار تھا۔ اندازہ ہی نہیں ہوتا تھا کہ کتنا کھا چکا ہوں لیکن پیٹ نہیں بھرتا تھا مگر اب ایسا نہیں ہے۔ اب میری بھوک نارمل ہوتی ہے۔ بھوک اور پیاس دونوں میں اعتدال آ گیا ہے۔ 3۔ میری شوگر ہائی رہتی تھی اور میں اس کے لیے مستقل دوائی کھاتا تھا۔ لیکن اللہ کے فضل اور [...]

Treatment of Anxiety, Depression, Stomach Disorder, GERD, Chronic Vaginitis, UTI, Bladder inflammation and body Pains – Review – Ayesha Ahmad

My name is Ayesha Ahmad age 38. A person with a disaster health history that started at very young age. I don’t think any feedback can do justice to what I feel has happened after starting treatment with Dr. Kaisrani. Being a daughter of a very ill women who passed away when I was only 1 year old, I think my health issues started from there. At the age of 23, I started to have multiple issues after having my gallbladder removed, soon after I was diagnosed as having fibromyalgia since doctors in the USA were unable to diagnose reasons of my chronic body pains. Things escalated from there: anxiety, depression, chronic pains, GERD (Gastroesophageal reflux disease), Chronic Vaginitis, poor immune system, UTI’s (Urinary Track Infection), bladder inflammation, appendicitis. You name it I had them all. I started with Dr. Hussain Kaisrani about a month ago. I feel I have hit a jackpot. Having such health history, I have seen many specialists in and out of Pakistan, several homeopaths and herbalists. I have never seen a doctor who listens to his patients with so much patience and interest as Dr. Kaisrani does. I feel most doctors often don’t succeed in treatment, mainly because they don’t extract the feelings of their patients completely, unlike Dr. Kaisrani. I am feeling much better, my stomach problem is almost gone, and I have stopped taking GERD medication after 14 years. My anxiety and depression is almost over. He is working hard for me to [...]

CoronaVirus – The advantage of Homeopathy – George Vithoulkas

The advantage of Homeopathy lies in the fact that the diagnosis of the indicated remedy is based on the individual symptoms not in the pathology. This pandemic is a great opportunity for homeopathy to show the advantage we have over other systems of medicine. Why? Because conventional medicine has to wait until they have found the cause for the pathology before they can start treating a case. On the contrary, in homeopathy we take in to consideration the response of the organism to the causative factor (the totality of the symptoms) in order to start the treatment. Therefore the intervention can be immediate. The totality of symptoms for each patient become the guiding signs for finding the indicated remedy. Therefore a homeopath can prescribe a remedy with the first manifestation of symptoms and in this way, “preventing" the full development of the pathology (state of pneumonia). This type of “preventing" has been misinterpreted by some homeopaths who think that we, homeopaths, also have remedies that will be acting like a “vaccine” ! This is a totally wrong perception, homeopathy cannot provide “preventive" remedies with the kind of effectiveness a vaccine may have. If the right remedy is given in an organism under a minor stress, like when we get a common cold or a simple flu, the organism will reset instantly and will not develop in to a bronchitis or pneumonia. In such a case, a dose of Aconitum or of Arsenicum will work in many cases of simple flu, [...]

By |March 21, 2020|Categories: Professional|0 Comments

کورونا وائرس ۔ ڈر، خوف اور فوبیا ۔ حسین قیصرانی

Coronavirus disease (COVID-19) - Urdu - Hussain Kaisrani گزشتہ چند روز سے بے شمار فون کالز اور میسیج موصول ہو رہے ہیں کہ کورونا وائرس پر میرا نقطہ نظر کیا ہے؟ میں ذاتی طور پر حکومت کی طرف سے جاری ہونے والی ہدایات و راہنمائی کو ہی حتمی سمجھتا ہوں، اُس پر خود بھی عمل کرتا ہوں اور اپنے حلقہ اثر میں اُسی کی تلقین کرتا ہوں۔ ایسے اہم اور وبائی مسئلہ کے لئے قومی لائحہ پر پوری طرح عمل کرنا بے حد ضروری ہے۔ کورونا وائرس کی دہشت اتنی زیادہ ہے کہ حساس انسان اب احتیاط سے زیادہ ڈر خوف اور فوبیا کا شکار ہونے لگے ہیں۔ احتیاط کی بہت سخت ضرورت ہے مگر ڈر خوف سخت کمزوری کا باعث بن سکتا ہے۔ مفادِ عامہ کے لئے، اس حوالہ سے، کچھ گزارشات اِس ویڈیو میں پیشِ خدمت ہیں۔ شکریہ! Coronavirus disease (COVID-19)

By |March 15, 2020|Categories: Lectures, videos|0 Comments

زندگی کا مزہ آنے لگا ہے ۔ فیڈبیک

اسلام وعلیکم سر۔ آپ کے علاج میں کوئی شک نہیں۔ مجھے پہلے ماہ میں ہی واضح تبدیلیاں ملنا شروع ہو گئی تھیں۔ اب ہمیں 4 ماہ ہو گئے ہیں اور میں اپنے آپ کو فٹ محسوس کرتا ہوں۔ ایک دو چیزیں رہتی ہیں وہ اب فوکس کر لیں گے ۔جو مسائل بہتر ہوۓ ہیں وہ آپ کو لسٹ بنا کر بھیج رہا ہوں۔ ۔1 میری بھوک بہت بہتر ہوئی ۔2 مجھے پیاس بالکل نہیں لگتی تھی اب میں ٹھیک ٹھاک پانی پی لیتا ہوں ۔3 کام کاج کو خاص دل نہیں کرتا تھا مگر اب ہر کام دل جمعی سے کر پاتا ہوں ۔4 پہلے میرے مزاج میں غصہ (Anger) اور انزائٹی (Anxiety) بہت تھی اب خوشی اور نرمی آ گئی ہے۔ ۔5 پہلے کسی کام کو کرنے کی قوت ارادی کم تھی اب جس کام کا ارادہ کر لوں اللہ کے کرم سے وہ میرے لیے کرنا مشکل نہیں رہا۔ ۔6 پہلے فیصلے کرنے میں ڈبل ماینڈڈ (Double Minded and Confused) رہتا تھا مگر اب واضح فیصلے کر پاتا ہوں۔ ۔7 اپنے فیصلے اور اردے پر ڈٹ جانے کی صلاحیت بھی پیدا ہو گئی ہے جو کہ پہلے بہت کم تھی۔ ۔8 بال گرنے (Hair Fall Controlled) میں بھی کافی بہتری ہو گئی ہے۔ ۔9 کونفیڈینس (Self Confidence) میں بہت بہتری ہے۔ ۔10 ویٹ بھی گین (Weight Gain) ہوا۔ ۔11 حالات کا سامنا کرنے کی صلاحیت پیدا ہو چکی ہے۔ ۔12 نیگیٹو خیالات (Negative Thoughts) سے پوزیٹو خیالات (Positive Thinking) کا سفر کافی بہتر رہا۔ ۔13 بائیک چلاتے وقت [...]

By |March 8, 2020|Categories: Homeopathic Awareness, Homeopathy in Urdu|0 Comments

Coronavirus Covid – 19 – Analysis of symptoms from confirmed cases with an assessment of possible homeopathic remedies for treatment and prophylaxis – Dr. Manish Bhatia

Dr. Manish Bhatia provides an in-depth analysis of the recorded symptom-set of patients of Coronavirus Covid-19 infection with an analysis of the possible group of indicated homeopathic remedies for treatment and prophylaxis. Coronavirus Covid-19 – Analysis of symptoms from confirmed cases with an assessment of possible homeopathic remedies for treatment and prophylaxis March 4, 2020Dr. Manisha & Dr. Manish Bhatia Know Your Disease coronavirus latest updates symptoms and homeopathy treatment Read Homeopathy Books by Dr. Bhatia Alert: New important information added in Postscript at the end of the article! Last update: 14th March 2020. The current epidemic (2019-2020) of Coronavirus Covid-19 that started in Wuhan, China, has created a state of panic, which is disproportionate to the mortality rate of this infection. Along with the rising alarm, people in cities where new cases are being discovered, are stocking up on essential medicines, food, masks and sanitizers, creating a shortage in the market for those who really need these products. People have been promoting alternative cures and prophylaxis too and homeopathy seems to be the most promising and most actively circulated prophylaxis through Facebook, Whatsapp and other social media. The most commonly recommended homeopathic medicines are Arsenicum album, Gelsemium, Influenzinum, Mercurius and Argentum nitricum. The Government of India has officially announced Arsenicum album as a likely prophylactic for Coronavirus infection (I have been told that CCRH did consider symptoms published in The Lancet before recommending Ars-alb).[i] The problem with most of these recommendations is that they are not based on actual [...]

By |March 4, 2020|Categories: Professional|0 Comments

Homeopathic Remedy Lachesis mutus (lach.) لیکسیس – The Essence of Materia Medica by George Vithoulkas

Lachesis mutus (lach.) Main idea is overstimulation, which is constantly seeking an outlet for relief, like a pot that is boiling all the time; needs an outlet or will break down. Snake poison; initially the poison goes through the bloodstream, stimulates first, and then on the more specific areas. Primary target is circulation (from study of Materia Medicas you must get the preference of remedies for certain systems). People with idiopathic high blood pressure. Flushes of heat in different ages. Haemorrhages, particularly where the colour is quite dark. Headaches, varicose veins, haemorrhoids, and all kinds of heart ailments. Appearances of ulcers and eruptions – a pink appearance, cyanotic, purplish. Sensation of circulation. Sleep is difficult. Rhythm in the circulation or in the morning. Sleep-morning, these are aggravating times for Lachesis. Worse by heat, if suddenly heated up, which changes the circulation. Worse after entering shower or a very hot room. Worse before menses – as soon as menses starts there is a general amelioration of the patient. Often feel a choking sensation in the throat. Wake up in a panic as if the breath has stopped. Lachesis leads all remedies in the symptom, “wake up in a panic”, worse by a suppression of discharges. Outlet can even be restricted by the clothes, especially around the neck, also chest and waist. Psychological restrictions on the patient will have the same kind of intolerance. If asked to do something immediately by his wife, he will feel the pressure. Intelligent. Easy flow of [...]

میری عمر 25 سال ہے۔ میں ایک ہاؤس وائف ہوں۔ تعلق کراچی سے ہے لیکن شادی کے بعد مجھے لاہور آنا پڑا۔ میرے مسئلے کا آغاز بیس سال کی عمر میں ہوا۔ مجھے اپنے جسم میں مختلف تبدیلیوں کا احساس ہونے لگا۔ میرا وزن بڑھنے لگا۔ مینسز، حیض میں بے قاعدگی (irregular menstrual cycle) آنے لگی۔ میری جلد بہت حساس (sensitive skin) ہو گئی اور اکثر الرجی (Allergy) رہنے لگی۔ ان تبدیلیوں نے جہاں میرے جسم کو نقصان پہنچایا وہاں ذہن بھی متاثر ہوئے بغیر نہ رہ سکا۔ اس ساری صورت حال نے مجھے دقیانوسی بنا دیا اور میں بہت زیادہ منفی سوچنے لگی۔ مجھ پر ہر وقت مایوسی (depression) طاری رہتی۔ میں پریشانی اور ذہنی دباؤ (mental stress) کا شکار رہتی۔ ان تمام تکلیف دہ مسائل کا نتیجہ ایک انتہائی اذیت ناک بیماری بواسیر (piles / hemorrhoids) کی شکل میں نکلا۔ پچھلے دو سال سے میں ان تمام مسائل سے دوچار تھی اور ہومیوپیتھک علاج کروا رہی تھی۔ لیکن بواسیر کی علامات کے تحت دی جانے والی ادویات مجھے آرام دینے میں ناکام رہیں۔ پچھلے سال حمل کے دوران میری حالت بہت خراب تھی اور ڈیلوری کے بعد تو صورت حال نہایت ابتر ہو گئی۔ خونی بواسیر نے میرا جینا دوبھر کر دیا۔ میں اپنی اصل حالت سے بے خبر تھی کیونکہ میں اس مسئلے کے لئے کبھی کسی ایلوپیتھک ڈاکٹر کے پاس نہیں گئی تھی۔ میں نے کبھی اپنا معائنہ نہیں کروایا تھا۔ فیملی ہسٹری میں دل اور شوگر کی بیماریوں کا رجحان تھا اس لیے مجھے اندازہ تھا [...]

شدید حساسیت، نیند، بھوک اور سر درد کے مسائل ۔ ہومیوپیتھک دوا اسارم کا دلچسپ کیس ۔ حسین قیصرانی

25 سالہ ڈاکٹر ملک نے اپنے پرانے اور بے شمار مسائل پر بات کرنے کے لیے اسلام آباد سے فون کیا۔ ان کی صحت کی صورت حال بہت پیچیدہ تھی کیوں کہ کچھ مسائل بہت نمایاں تھے اور کچھ بے پناہ مبہم اور الجھے ہوئے۔ سب سے پہلے واضح اور زیادہ تکلیف دہ مسائل (Uppermost Layer) کا علاج شروع کیا گیا۔ ڈاکٹر صاحبہ کو نیند (sleeplessness) نہیں آتی تھی اور اگر کسی طرح آنکھ لگ بھی جاتی تو ڈراؤنے خواب (nightmares) پریشان کرتے تھے۔ ایک اَن جانا خوف (Fear & Phobia of Unknown) طاری رہتا تھا۔ بلا وجہ انگزائٹی (Anxiety) رہتی جیسے کوئی الجھن ہو۔ وہ (Anorexia) کا شکار تھی۔ بھوک محسوس ہی نہیں ہوتی تھی۔ جسم پر کپکپی طاری رہتی تھی۔ مسائل اتنے پرانے اور شدید نوعیت کے تھے کہ مریضہ کو اس مقام تک پہنچنے میں وقت لگا جہاں اس کے بنیادی مسائل بہتر ہونے لگے اور کچھ نئی علامات ظاہر ہوئیں جو کسی حد تک غیر معمولی بھی تھیں اور غیر واضح بھی۔ ان سے فون، ای میل اور وٹس ایپ کے ذریعے رابطہ رہا۔ کچھ شکایات جو مسلسل موصول ہو رہی تھیں وہ زیادہ نمایاں تو نہ تھیں مگر انھوں نے انہیں پریشان کر رکھا تھا۔ ان کا فیڈبیک جاری رہا اور کیس پر نظرثانی کی جاتی تھی۔ بار بار کی ڈسکشن سے مریضہ کی علامات کا ایک بالکل نیا رخ سامنے آیا یا یوں کہہ لیں کہ بہت سی پیچیدہ اور غیر واضح علامات کی کڑیوں سے کڑیاں ملتی چلی گئیں جنھوں نے علاج کی [...]

By |February 26, 2020|Categories: Homeopathic Awareness, Mental Health, SOLVED CASES|0 Comments

Corona Virus – what homeopathy can do? Burning questions of the day, answered by Prof. George Vithoulkas

Q. What is your opinion of Corona Virus, what homeopathy can do? A. Unless we have selected the real symptoms of the different stages of this influenza from the clinicians who are dealing at this moment with the infected cases,we cannot do anything substantial. We should know the symptomatology of the beginning stages -before the pneumonia- and propose remedies for this stage in order to reduce the victims of going to the second stage. Also we should know the symptomatology of the later stage of pneumonia or diarrhea to propose different remedies for this advanced stage. But the symptomatology has to be taken by an experienced homeopath in order to be reliable. I think the best would be to establish contact with the clinicians in order to give us a first hand information. To give at random remedies as a prophylaxis and to make people think that they are protected it is irresponsible. Q. What do you think about those homeopaths who advertise that are treating cancer cases using homeopathic remedies while at the same time the patients are treated with allopathic drugs? Advertising that cancer cases can be cured by homeopathy in spite of the fact patients are treated with conventional drugs is an unethical act that should be avoided at all costs by any honest homeopath. The reasons are simple. A. The homeopathic remedy will act if it is prescribed according to the symptoms of the case. But in such a situation where the patient is under chemotherapy, [...]

By |February 15, 2020|Categories: George Vithoulkas, Homeopathic Awareness, Professional|0 Comments

رحم کی رسولیاں، فبرائیڈ، سر درد، کمر درد اور ہارمون کے مسائل ۔ كامیاب كیس، علاج اور دوا ۔ حسین قیصرانی

Click HERE For Original / English Version of this Case. A Solved Case of Polycystic Ovary Syndrome (PCOS), Uterine Fibroids and Ovarian Cysts – Homeopathic Treatment and Medicine (Hussain Kaisrani) (رواں اردو ترجمہ: محترمہ مہرالنسا) ڈنمارک (Denmark) کی رہائشی، دو بچوں کی والدہ، ڈاکٹر مسز خان نے علاج کے لئے فون پر رابطہ کیا۔ اسی سال ہی وہ اپنی پی ایچ ڈی (PhD) مکمل کر کے وہاں کی مشہور یوینورسٹی میں ریسرچ آفیسر تعینات ہوئی تھیں۔ گزشتہ چند سالوں کی بے پناہ مصروفیت نے انہیں ڈسٹرب کر دیا تھا۔ وہ سوچتی تھیں کہ تعلیم مکمل ہوتے ہی ایک اطمینان اور سکون والی زندگی کے مزے لوٹیں گی مگر اب جب وہ فارغ ہوئیں تو اندازہ ہوا کہ مزے تو کیا وہ روٹین لائف بھی نہیں چلا سکتیں۔ سب سے اہم مسئلہ تو رحم میں رسولیوں (Ovarian Cysts) ، (PCOD / PCOS) اور فائبرائیڈ (Fibroid) کا تھا تاہم اس کے علاوہ بھی وہ کئی جسمانی، جذباتی، ذہنی اور نفسیاتی تکلیفوں (Physical, emotional imbalances) میں پھنسی ہوئی تھیں۔ گزشتہ کئی سالوں سے وہ اس قدر مصروف رہیں اور پھر جوش جذبہ بھی خوب تھا تو مسائل پر مناسب توجہ دینے کا موقع ہی نہ مل سکا۔ اِدھر تھوڑی سی تکلیف ہوئی؛ اُدھر کوئی دوائی کھا لی۔ مگر اب دوائیاں بھی کام کرنا چھوڑ رہی ہیں۔ وٹس اپ پر گھنٹہ بھر کیس ڈسکس کرنے سے درج ذیل صورت حال سامنے آئی۔ جسمانی مسائل جسم میں جگہ جگہ درد رہتا ہے۔ خاص طور پر کندھوں اور کمر میں تو ہر وقت اور بہت زیادہ۔ اٹھتے [...]

مائیگرین، درد شقیقہ یعنی آدھے سر کا درد ۔ کامیاب کیس، ہومیوپیتھک دوائیں اور علاج ۔ حسین قیصرانی

وہ مرکز تھی کالج کی ساری سکھیوں کا کیوں نہ ہوتی وہ تھی ہی ایسی قدرت نے دلکش رنگوں سے اسے تراشا تھا کشمیری چہرے پہ آنکھیں غزل سناتی تھیں ہنستی تھی تو جھرنوں سے آوازیں آتی تھیں سنگی ساتھی سارے اس کے گرد منڈلاتے تھے اس کے ناز اٹھاتے تھے وہ مرکز جو تھی نازاں تھی اور ناداں بھی بھول گئی تھی مرکز کو تو بالآخر تنہا جلنا پڑتا ہے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔!۔ اہم ہونا کسے اچھا نہیں لگتا لیکن اگر ہم اہم ہونے کے ساتھ ساتھ حساس بھی ہوں تو نتائج مختلف بلکہ پریشان کن ہو سکتے ہیں۔ ہمارے دوست، ہمارے چاہنے والے اور دکھ سکھ کے ساتھی ہمارے دل میں ایک خاص جگہ بنا لیتے ہیں۔ ہمیشہ یہ احساس دلانے والے ساتھی کہ وہ ہمارے بغیر نہیں رہ سکتے، وقت گزرنے کے ساتھ ساتھ اپنی اپنی منزل کی جانب ہجرت کرنے لگتے ہیں لیکن ان کے پیچھے رہ جانے والے دکھ ہجرت نہیں کرتے بلکہ اندر سرایت کرنے لگتے ہیں۔ اور غیر محسوس انداز میں ہمارے ذہن کے کسی کونے میں اپنا ٹھکانہ بنا لیتے ہیں؛ خاموشی سے ہماری شخصیت کے تانے بانے بکھیرنے لگتے ہیں اور یہ سلسلہ چلتا رہتا ہے تاوقتیکہ کوئی ان کے ٹھکانے تک نہ پہنچ جائے ۔۔۔۔۔۔ شدید سر درد میں مبتلا ڈاکٹر "ف" کے ساتھ بھی کچھ ایسا ہی ہوا۔ وہ میرے پاس اپنے میگرین (Migraine) کے علاج کے لئے آئی تھی۔ کہنے لگیں:میں سال بھر سے مستقل سر درد میں مبتلا ہوں۔ پہلے تو یہ کسی نہ کسی دوائی سے وقتی طور [...]