مردوں کے مسائل، بے اولادی اور کمزوریاں ۔ ہومیوپیتھک دوائیں اور علاج ۔ حسین قیصرانی

By |2020-11-29T14:45:56+05:00May 12, 2020|Categories: Genitourinary|Tags: |

بہت اہم نوٹ: اس آرٹیکل میں بتائی گئی تمام دوائیاں بہت گہری اور لمبا عرصہ کام کرتی ہیں۔ ڈاکٹرز سے کیس ڈسکس کئے بغیر اِن کا لمبا استعمال فائدہ تو کوئی نہیں دے سکتا لیکن گردوں کو مکمل فیل کر سکتا ہے۔ مریض اپنا علاج خود نہ کریں بلکہ اعتماد کے ڈاکٹر سے کروائیں۔ یہ بھی یاد رکھیں ایسی کمزوریوں کا علاج کم از کم چھ سات ماہ تک چلتا ہے تو ہی واضح بہتری ہوتی ہے۔ جو لوگ جلد بازی میں ہوتے ہیں اور پوچھ پاچھ کر دوائی استعمال کرنا چاہتے ہیں، ہومیوپیتھک ٹاپ اور کامیاب دوائیں بھی اُن کو ذرہ برابر بھی فائدہ نہیں دیا کرتیں۔ اس لئے یہاں کسی کمنٹ یا دوائی پوچھنے کا ریسپانڈ نہیں دیا جا سکے گا۔ ------------ ایک وقت میں صرف ایک ہی دوا بھی ہومیوپیتھی کا بنیادی اصول ہے۔ اس میں آلہ تناسل یعنی نفس، خصئے، پراسٹیٹ گلینڈ اعضاء ہیں۔ پراسٹیٹ مذی پیدا کرتا ہے جس کی وجہ سے شہوت بیدار ہوتی ہے۔ خصئے منی پیدا کرتے ہیں جو مادہ تولید ہے۔ یہ مادہ بذریعہ آلہ تناسل خارج ہوتا ہے۔ جنسی بلوغت تقریباً بارہ برس کی عمر میں نمودار ہوتی ہے۔ نسل جاری رہنے  کا یہ نظام حیوانی ہے۔ اس میں انسان [...]