showcase demo picture

ڈر، خوف، فوبیاز اور الرجی ۔ ایک نقطہ نظر (حسین قیصرانی)۔

Phobia and Fears

ڈر، خوف، فوبیاز اور الرجی (Fear and Phobias) کے متعلق میرا نقطہ نظر – حسین قیصرانییہ ویڈیو ایک مشہور برطانوی ٹی وی پروگرام The Sketch Show کا ایک چھوٹا سا حصہ ہے۔ ہم سے اکثر لوگوں کے لئے یہ صرف ہنسی مزاح کا پروگرام ہے لیکن درحقیقت یہ ترقی یافتہ ممالک کا المیہ ہے. وہاں کا ہر دوسرا باشندہ کسی ایسی الرجی، ڈر، خوف اور فوبیا کا شکار ہے جس کا میڈیکل سائنس میں کوئی حل اور علاج ہی نہیں۔ ساری تعلیم و تربیت اور منصوبہ بندی اِس کی ہوتی ہے کہ اِن مسائل کا شکار انسان ایسے معاملات سے بچے جس سے اُسے الرجی یا فوبیا کا خطرہ ہے۔ حیرت انگیر بات یہ ہے کہ انسان کا مدافعتی نظآم اتنا غیر متوازن ہو جاتا ہے کہ وہ ایسی خوراک یا امور سے جتنا بچتا ہے، اُتنا ہی اُن میں کھنچتا چلا جاتا ہے۔ ہمارے ارد گرد ایسے بہت سے لوگ ہوتے ہیں کہ جن کو پتہ ہوتا ہے کہ مرغن کھانا کھانے سے ان کی طبیعت سخت خراب ہوتی ہے لیکن وہ ضرور کھاتے ہیں۔ کتنے ہیں کہ جن کو حقہ، سگریٹ پیتے ہی کھانسی کا دورہ ہو جاتا ہے لیکن وہ سگریٹ ضرور پئیں گے۔ شوگر کے مریض میٹھا کھانے سے اپنی تکلیف بڑھاتے رہتے ہیں۔پاکستان میں بھی جب سے میڈیکل سہولتیں بہت عام ہونے لگیں اور انٹی بائیوٹیکس کا استعمال بے محابہ جاری ہو گیا تب سے ایسی دِقتیں اور نفسیاتی اُلجھنیں کھل کر سامنے آ رہی ہیں۔ ہمارے دیہی علاقوں میں، جہاں ڈاکٹرز تیس چالیس کلومیٹر سے پہلے نہیں مل سکتا تھا، وہاں الرجی نام کی کسی بلا سے کسی کو تعارف ہی نہیں تھا۔ ڈر خوف بھی عام طور پر جن بھوتوں تک ہی محدود تھے اور وہ جن بھوت نکالنے والوں کی پبلسٹی کے طفیل تھے۔ یورپ، برطانیہ اورمتحدہ عرب امارات میں ہر دوسری کھانے پینے کی چیز پر الرجی کی وارننگ نظر آتی ہے۔ برطانیہ کےسکولوں میں چھوٹے بچوں کے میڈیکل ٹیسٹ آئے دن ہوتے رہتے ہیں۔ وہاں کی نئی نسل کو جن ذہنی اور نفسیاتی مسائل میں مبتلا دیکھا، یہ ویڈیو اُس کی صرف ایک محدود سی جھلک پیش کرتی ہے۔ ہمیں اپنے بچوں کو کم سے کم دوا دینی چاہئے چاہے وہ ہومیوپیتھک ہو، یونانی یا ایلوپیتھک۔ ہر چھوٹی بڑی تکلیف کو جب ہم دوائی کے زور پر ٹھیک کرنے کی کوشش کرتے ہیں تو ہمارا دماغ اور مدافعتی نظام کنفیوز ہو جاتا ہے۔ ایسا بار بار کرنے پر ہمارے مدافعتی نظام کو صحیح اندازہ نہیں ہو پاتا کہ کون سا مسئلہ کتنا بڑا ہے اور اُس پر کیسے ردِعمل دینا ہے۔ مناسب حد تک کا نزلہ، زکام اور بخارانسانی صحت کے لئے نقصان دہ نہیں بلکہ بہت دفعہ یہ مجموعی صحت کی بہتری کا باعث ہوتے ہیں۔ انٹی بائیوٹیکس کا بے جا استعمال کوئی بھی اچھا میڈیکل ڈاکٹر نہیں کرواتا۔ اپنے اور اپنے خاندان کے لئے ایسے ڈاکٹر کا انتخاب کیجئے جو کم سے کم دوائی سے علاج کرنے کا مزاج رکھتا ہو۔ دوائیوں کا بے جا اور ہر وقت اِستعمال صحت کی بہتری کی بجائے ابتری کا باعث بنتا ہے۔ایک اصول یہ بھی یاد رکھئے! کسی بھی تکلیف کے علاج میں اگر آپ کی جذباتی اور ذہنی پریشانی بڑھنا شروع ہو جائے تو وہ علاج چاہے آپ کی جسمانی تکالیف ٹھیک بھی کیوں نہ کر دے؛ دراصل کسی بڑی تکلیف کی طرف لے جا رہا ہے۔ہومیوپیتھی میں الرجی، فوبیاز اور بے جا ڈر خوف کا علاج موجود ہے۔ علاج اور ادویات دراصل ان فوبیاز یا الرجی کا نہیں ہوتا بلکہ انسان کے مدافعتی نظام میں جو خرابی اور کنفیوزن کی کیفیت پیدا ہو جاتی ہے، اُس کو توازن میں لانے کا ہوتا ہے۔ نیچے دیے گئے لنک میں اِس علاج اور ادویات کی کچھ جھلکیاں مل سکتی ہیں۔پروردگار ہم سب کو صحت و سلامتی سے رکھیں!(حسین قیصرانی ۔ سائیکوتھراپسٹ & ہومیوپیتھک کنسلٹنٹ ۔ بحریہ ٹاون لاہور پاکستان ۔ فون نمبر 03002000210)http://kaisrani.com/homeopathic-treatment-medicines-fear-phobias/

Posted by Homeopathic Consultancy – Hussain Kaisrani on Thursday, 5 October 2017

 

یہ ویڈیو ایک مشہور برطانوی ٹی وی پروگرام The Sketch Show کا ایک چھوٹا سا حصہ ہے۔ ہم سے اکثر لوگوں کے لئے یہ صرف ہنسی مزاح کا پروگرام ہے لیکن درحقیقت یہ ترقی یافتہ ممالک کا المیہ ہے. وہاں کا ہر دوسرا باشندہ کسی ایسی الرجی، ڈر، خوف اور فوبیا کا شکار ہے جس کا میڈیکل سائنس میں کوئی حل اور علاج ہی نہیں۔ ساری تعلیم و تربیت اور منصوبہ بندی اِس کی ہوتی ہے کہ اِن مسائل کا شکار انسان ایسے معاملات سے بچے جس سے اُسے الرجی یا فوبیا کا خطرہ ہے۔ حیرت انگیر بات یہ ہے کہ انسان کا مدافعتی نظآم اتنا غیر متوازن ہو جاتا ہے کہ وہ ایسی خوراک یا امور سے جتنا بچتا ہے، اُتنا ہی اُن میں کھنچتا چلا جاتا ہے۔ ہمارے ارد گرد ایسے بہت سے لوگ ہوتے ہیں کہ جن کو پتہ ہوتا ہے کہ مرغن کھانا کھانے سے ان کی طبیعت سخت خراب ہوتی ہے لیکن وہ ضرور کھاتے ہیں۔ کتنے ہیں کہ جن کو حقہ، سگریٹ پیتے ہی کھانسی کا دورہ ہو جاتا ہے لیکن وہ سگریٹ ضرور پئیں گے۔ شوگر کے مریض میٹھا کھانے سے اپنی تکلیف بڑھاتے رہتے ہیں۔

پاکستان میں بھی جب سے میڈیکل سہولتیں بہت عام ہونے لگیں اور انٹی بائیوٹیکس کا استعمال بے محابہ جاری ہو گیا تب سے ایسی دِقتیں اور نفسیاتی اُلجھنیں کھل کر سامنے آ رہی ہیں۔ ہمارے دیہی علاقوں میں، جہاں ڈاکٹرز تیس چالیس کلومیٹر سے پہلے نہیں مل سکتا تھا، وہاں الرجی نام کی کسی بلا سے کسی کو تعارف ہی نہیں تھا۔ ڈر خوف بھی عام طور پر جن بھوتوں تک ہی محدود تھے اور وہ جن بھوت نکالنے والوں کی پبلسٹی کے طفیل تھے۔

یورپ، برطانیہ اورمتحدہ عرب امارات میں ہر دوسری کھانے پینے کی چیز پر الرجی کی وارننگ نظر آتی ہے۔ برطانیہ کےسکولوں میں چھوٹے بچوں کے میڈیکل ٹیسٹ آئے دن ہوتے رہتے ہیں۔ وہاں کی نئی نسل کو جن ذہنی اور نفسیاتی مسائل میں مبتلا دیکھا، یہ ویڈیو اُس کی صرف ایک محدود سی جھلک پیش کرتی ہے۔

ہمیں اپنے بچوں کو کم سے کم دوا دینی چاہئے چاہے وہ ہومیوپیتھک ہو، یونانی یا ایلوپیتھک۔ ہر چھوٹی بڑی تکلیف کو جب ہم دوائی کے زور پر ٹھیک کرنے کی کوشش کرتے ہیں تو ہمارا دماغ اور مدافعتی نظام کنفیوز ہو جاتا ہے۔ ایسا بار بار کرنے پر ہمارے مدافعتی نظام کو صحیح اندازہ نہیں ہو پاتا کہ کون سا مسئلہ کتنا بڑا ہے اور اُس پر کیسے ردِعمل دینا ہے۔ مناسب حد تک کا نزلہ، زکام اور بخارانسانی صحت کے لئے نقصان دہ نہیں بلکہ بہت دفعہ یہ مجموعی صحت کی بہتری کا باعث ہوتے ہیں۔ انٹی بائیوٹیکس کا بے جا استعمال کوئی بھی اچھا میڈیکل ڈاکٹر نہیں کرواتا۔ اپنے اور اپنے خاندان کے لئے ایسے ڈاکٹر کا انتخاب کیجئے جو کم سے کم دوائی سے علاج کرنے کا مزاج رکھتا ہو۔ دوائیوں کا بے جا اور ہر وقت اِستعمال صحت کی بہتری کی بجائے ابتری کا باعث بنتا ہے۔

ایک اصول یہ بھی یاد رکھئے! کسی بھی تکلیف کے علاج میں اگر آپ کی جذباتی اور ذہنی پریشانی بڑھنا شروع ہو جائے تو وہ علاج چاہے آپ کی جسمانی تکالیف ٹھیک بھی کیوں نہ کر دے؛ دراصل کسی بڑی تکلیف کی طرف لے جا رہا ہے۔

ہومیوپیتھی میں الرجی، فوبیاز اور بے جا ڈر خوف کا علاج موجود ہے۔ علاج اور ادویات دراصل ان فوبیاز یا الرجی کا نہیں ہوتا بلکہ انسان کے مدافعتی نظام میں جو خرابی اور کنفیوزن کی کیفیت پیدا ہو جاتی ہے، اُس کو توازن میں لانے کا ہوتا ہے۔ نیچے دیے گئے لنک میں اِس علاج اور ادویات کی کچھ جھلکیاں مل سکتی ہیں۔

پروردگار ہم سب کو صحت و سلامتی سے رکھیں!

(حسین قیصرانی ۔ سائیکوتھراپسٹ & ہومیوپیتھک کنسلٹنٹ ۔ بحریہ ٹاون لاہور پاکستان ۔ فون نمبر 03002000210)

The Homeopathic Treatment and Medicines for Fear and Phobias

https://web.facebook.com/hussain.kaisrani/videos/1455741367866379/

Related Posts

Posted in: Homeopathic Awareness, Homeopathy in Urdu, Mental Health Tagged: ,
Return to Previous Page

Leave a Reply

Your email address will not be published.

About - Hussain Kaisrani

Hussain Kaisrani, The chief consultant and director at Homeopathic Consultancy, Lahore is highly educated, writer and a blogger kaisrani.blogspot.com He has done his B.Sc and then Masters in Philosophy, Urdu, Pol. Science and Persian from the University of Punjab. Studied DHMS in Noor Memorial Homeopathic College, Lahore and is a registered Homeopathic practitioner from National Council of Homeopathy, Islamabad He did his MBA (Marketing and Management) from The International University. He is working as a General Manager in a Publishing and printing company since 1992. Mr Hussain went to UK for higher education and done his MS in Strategic Management from University of Wales, UK...
read more [...]

HOMEOPATHIC Consultants

We provide homeopathic consultancy and treatment for all chronic diseases.

Contact US


HOMEOPATHIC Consultants
Bahria Town Lahore – 53720

Email: kaisrani@gmail.com
Phone: (0092) 03002000210
Blog: kaisrani.blogspot.com
Facebook:fb.com/hussain.kaisrani
read more [...]